برٹش ورجن آئی لینڈ کا پاکستان کی مدد سے انکار

برٹش ورجن آئی لینڈ (بی وی آئی) کی حکومت نے سابق وزیراعظم نواز شریف، ان کے بچوں اور ان کی آف شور کمپنیوں (نیلسن اور نیسکول) کیخلاف مجرمانہ تحقیقات میں قانونی معاونت فراہم کرنے کی پاکستان کی درخواست قبول کرنے سے انکار کر دیا ہے۔ 

ذرائع نے بتایا ہے کہ بی وی آئی کے اٹارنی جنرل نے باضابطہ طور پر بتایا ہے کہ پاکستانی حکام کی جانب سے بھیجی جانے والی درخواست برائے باہمی قانونی معاونت میں غلطیاں ہیں اور ان میں جرم بشمول کرپشن کے حوالے سے کوئی ذکر ہے اور نہ ہی درخواست میں یہ بنیادی بات بتائی گئی ہے کہ آخر تحقیقات کس چیز کی کرنا ہے۔

بی وی آئی کے خط میں لکھا ہے کہ حقائق کے اختصار میں یہ معلومات کا پس منظر نہیں بتایا گیا جس سے یہ معلوم ہو سکے کہ افراد ور کمپنیوں کے درمیان کوئی گٹھ جوڑ ہے جب کہ مبینہ جرم کا بھی کوئی ذکر نہیں۔

خط میں مزید کہا گیا ہے کہ درخواست میں لازمی طور پر اس بات کا ذکر ہونا چاہیے کہ مذکورہ افراد اور کمپنیوں کی جانب سے کرپشن یا کرپٹ اقدامات کے جرائم کس طرح کیے گئے ہوں گے۔

بی وی آئی کے خط میں مزید لکھا ہے کہ درخواست میں متعلقہ بینک کی معلومات بھی نہیں بتائی گئی جس میں بینک کا نام، مذکورہ افراد / کمپنیوں کے اکاؤنٹ نمبرز شامل ہیں جن کے خلاف تحقیقات اور معلومات جمع کرنا ہے۔

بی وی آئی سے مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) / نیب نے لندن میں قائم پاکستانی ہائی کمیشن کے توسط سے باہمی قانونی معاونت کیلئے رابطہ کیا تھا تاکہ کرپشن اور کرپٹ اقدامات کے حوالے سے مجرمانہ نوعیت کی تحقیقات کرائی جا سکیں اور ساتھ ہی میاں نواز شریف، ان کے اہل خانہ اور کمپنیوں (نیلسن انٹرپرائزز لمیٹڈ اور نیسکول لمیٹڈ) کے ٹیکس ریکارڈ، بینک اکائونٹس کی معلومات اور کمپنی کے ریکارڈز حاصل کیے جاسکیں۔

پاکستان کی جانب سے بھیجی جانے والی درخواست کا جائزہ لینے کے بعد بی وی آئی نے اس درخواست کو ورجن آئی لینڈ کے قوانین سے مطابقت نہ رکھنے والی درخواست تصور کیا ہے۔

بی وی آئی کے اٹارنی جنرل کی جانب سے پاکستانی حکام کو لکھا گی ہے کہ ہم آپ کو آپ کی درخواست کے حوالے سے کوئی قانونی معاونت فراہم نہیں کر سکتے۔ پاکستانی حکام کو بتایا گیا ہے کہ آپ اپنی درخواست میں پائی جانے والی خامیوں، یعنی یہ دیکھنے کے بعد کہ آپ کی درخواست ورجن آئی لینڈ کے قوانین سے مطابقت کیوں نہیں رکھتی اور ان خامیوں کو دور کرنے کے بعد دوبارہ درخواست بھیج سکتے ہیں جس کا جائزہ لیا جائے گا۔

ایک طرح سے دیکھا جائے تو بی وی آئی کے خط نے مبینہ جرم بشمول کرپشن اور منی لانڈرنگ کو شریف خاندان اور ان کی آف شور کمپنیوں نیسکول اور نیلسن کے ساتھ جوڑنے میں نیب اور جے آئی ٹی کی ناکامی کو بے نقاب کر دیا ہے۔

یہ بھی دلچسپ بات ہے کہ پاکستانی حکام شریف خاندان کو ان کی آف شور کمپنیوں / دولت کی وجہ سے سزا دلوانے میں جلدبازی کر رہے ہیں لیکن ان کے پاس معاملے کی تحقیقات کو درست سمت میں لیجانے کیلئے بنیادی معلومات تک موجود نہیں۔

گزشتہ برس جولائی میں برٹش ورجن آئی لینڈ نے 2آف شور کمپنیز نیسکول اور نیلسن جو شریف فیملی کے چار ایون فیلڈ اپارٹمنٹ کو کنٹرول کرتی ہیں ، کیخلاف مبینہ خلاف ورزیوں سے متعلق مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کی مدد کرنے سے انکار کردیا تھا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

x

Check Also

گوجرانوالہ پولیس نےبغیراجازت عوامی مقامات پر ویڈیوز بناکر خواتین کرہراساں کرنے کے الزام میں ایک یوٹیوبر کو گرفتار کرلیا۔ ملزم مذاق کے نام پر خواتین کو مختلف باتوں پر ہراساں کرتا تھا اور گزشتہ کئی دنوں سے سوشل میڈیا پر اس پر خوب تنقید کی جارہی تھی اور پولیس سے ایکشن لینے کا مطالبہ کیا جارہا تھا۔ ملزم پر خواتین سے غیراخلاقی حرکات ، اسلحہ کے زورپرگالم گلوچ کرنے کے الزام میں مقدمہ درج کرلیاگیا ہے۔ گوجرانوالہ پولیس نے لاہور کے علاقے محمود بوٹی میں کارروائی کرکے ملزم محمد علی کو گرفتار کرلیا۔ ملزم گکھڑ منڈی کا رہائشی ہے جس نے سوشل میڈیاپر اپنا چینل بنارکھا ہے ۔ ایس پی صدر عبدالوہاب کےمطابق ملزم مزاحیہ ویڈیوز کے ذریعے شہرت حاصل کرنے کے لیے مختلف عوامی مقامات اور پارکس میں بیٹھی خواتین کو ہراساں کرکے ان کی تذلیل کرتا اور ویڈیو سوشل میڈیا پر اپ لوڈ کردیتا تھا۔ پولیس نے ملزم کے خلاف مقامی شہری کی مدعیت میں مقدمہ درج کرکے کارروائی شروع کردی ہے۔

مزاحیہ ویڈیو کے نام پر خواتین کو ہراساں کرنے والا یوٹیوبر گرفتار

گوجرانوالہ پولیس نےبغیراجازت عوامی مقامات پر ویڈیوز بناکر خواتین کرہراساں کرنے کے الزام میں ایک ...

%d bloggers like this: