وزیراعظم کے استعفے کے بغیر مذاکرات ناممکن

وزیراعظم کے استعفے کے بغیر مذاکرات ناممکن

جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن نے کہا ہے کہ مذاکرات صرف وزیراعظم عمران خان کے استعفے کے بعد ہی ہوسکتے ہیں۔

پارٹی اجلاس کے بعد صحافیوں سے گفتگو میں مولانا فضل الرحمٰن نے وزیر دفاع پرویز خٹک کی سربراہی میں قائم کمیٹی سے مذاکرات کرنے سے انکار کردیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ مذاکرات کےلیے ان کے دل اور دروازے کھلے ہیں ،اگر کوئی بات کرنا چاہتا ہے تو وزیراعظم عمران خان کا استعفیٰ ساتھ لے کر آئے۔

جے یو آئی (ف) کے سربراہ نے دو ٹوک انداز میں کہا کہ وزیراعظم کے استعفے سے کم پر کسی سے بھی، کسی بھی قسم کے مذاکرات کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔

علاوہ ازیں چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے ایک بیان میں کہا کہ وہ وزیراعظم کو گھر بھیجنے کے مولانا فضل الرحمٰن کے مطالبے کے ساتھ ہیں۔

اپوزیشن جماعت ن لیگ کے جنرل سیکریٹری احسن اقبال نے کہا کہ ملک کو بچانے کے لیے حکومت کو گھر بھیجنا ضروری ہے ، فوری نئے انتخابات کرائے جائیں۔

x

Check Also

آرمی چیف کی دوسری مدت سے دو دن پہلے فوج میں اہم تبدیلیاں

بری فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے اپنے دوسرے دور ملازمت شروع ہونے ...

%d bloggers like this: