چارسدہ: ڈیزائن والی داڑھی بنانے پر گرفتاریاں

خیبر پختونخوا کی تحصیل چارسدہ کے علاقے شب قدر کی پولیس نے مقامی حجاموں کی جانب سے داڑھی کا اسٹائل بنانے کو غیر اسلامی قرار دے کر اس پر غیر سرکاری پابندی عائد کیے جانے کے بعد کئی حجام اسٹائل والی داڑھی بنانے پر گرفتار کرلیے۔

واقعہ سوشل میڈیا پر رواں ہفتے پھیلنے والی ویڈیو میں سامنے آیا جس میں شاپ کیپرز یونین کے صدر سمین کو پولیس کو حجام کی گرفتاری میں مدد کرتے دیکھا گیا۔

مذکورہ شخص نے حجام سے سوال کیا کہ وہ اپنے صارفین کی داڑھی پابندی کے باوجود داڑھی کیوں بنارہے ہیں۔

سمین کے مطابق چند روز قبل یونین نے داڑھی پر ڈیزائن بنانے پر پابندی عائد کی تھی اور تمام حجاموں کو کو اس بارے میں مطلع کیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘ہمارے فیصلے کے باوجود چند دکان مالکان داڑھیوں کو اسٹائل میں کاٹ رہے ہیں’۔

انہوں نے کہا کہ یونین کی شکایت پر پولیس نے متعدد حجام کی دکانوں سے 4 ملازمین کو گرفتار کرلیا ہے۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ ‘پولیس نے ان تمام پر 5 ہزار روپے کا جرمانہ عائد کیا اور انہیں آئندہ ایسا نہ کرنے کی وارننگ دے کر چھوڑ دیا تھا’۔

شب قدر تھانے نے گرفتارے کی تصدیق کی جو 30 ستمبر کو عمل میں آئی تھی۔

تھانے میں تعینات اہلکار نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا کہ پولیس کو تاجروں کی جانب سے شکایت موصول ہوئی تھی۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘تاجر برادری نے شکایت کی کہ داڑھی پر ڈیزائن بنانے پر پابندی ہونے کے باوجود چند حجام ایسا کر رہے ہیں، گرفتار افراد کو چند گھنٹوں بعد رہا کردیا گیا تھا’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘ہم نے ایف آئی آر درج نہیں کی اور نہ ہی کوئی جرمانہ کیا اور یونین کی درخواست پر ہی انہیں چھوڑ دیا تھا’۔

انہوں نے کہا کہ ‘حجاموں نے ہمیں یقین دہانیئ کرائی کہ وہ آئندہ داڑھی پر ڈیزائن نہیں بحجامں گے’۔

تاہم چارسدہ کے ضلعی پولیس افسر نے پولیس کی ایسی کارروائی کو مسترد کردیا اور کہا کہ ‘پولیس نے دو حجام کے درمیان تنازع کے حل کے لیے چھاپہ مارا تھا اور حجاموں کو گرفتار کیا تھا’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘2 ملازمین نے ایک دوسرے پر حملہ کیا تھا اور پولیس نے 4 افراد کو گرفتار کیا تھا’۔

گرفتار ہونے والے حجاموں سے رائے کے لیے رابطہ نہیں ہوسکا۔

علاوہ ازیں علاقے میں آصف نامی حجام کا کہنا تھا کہ چند ماہ قبل اس طرح کی پابندی کا فیصلہ چارسدہ میں منعقدہ آل پاکستان ہیئر ڈریسز یونین کے اجلاس میں کیا گیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ فیصلے کو تحصیل کی عوام مذہبی رہنماؤں نے سراہا تھا۔

‘غیر اسلام’

چند ماہ قبل پشاور میں حجاموں کی یونین نے بھی ڈیزائن والی داڑھی بنانے کو اسلام مخالف قرار دیتے ہوئے اس پر پابندی کا فیصلہ کیا تھا۔

یہ فیصلہ فرنٹیئر پروفیشنل ہیئر ڈریسرز ایسوسی ایشن کے اجلاس میں کیا گیا تھا جس کا دعویٰ مقامی حجاموں پر مشتمل واحد رجسٹرڈ اور نمائندہ ادارہ ہونے کا دعویٰ ہے۔

ایسوسی ایشن کے صدر محمد شریف کے مطابق یہ اجلاس پشاور میں معقد ہوا جس میں صوبے بھر سے متعلقہ افراد نے شرکت کی تھی۔

انہوں نے اس وقت بتایا تھا کہ شرکا نے داڑھی پر ڈیزائن نہ بنانے پر رضامندی کا اظہار کیا ہے۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ فیصلے کے بعد کئی حجاموں نے پشاور میں صارفین کی داڑھی پر ڈیزائن بنانا روک دیا ہے۔

ایسوسی ایشن نے پشاور اور دیگر ضلعوں میں پیمفلٹس بھی جاری کیے جس میں حجاموں سے داڑھی پر ڈیزائن نہ بنانے کا کہا گیا تھا۔

پشاور کے سکندر پورہ، سرکلر روڈ، ہشت نگری اور دیگر علاقوں میں حجاموں نے اپنی دکان کے داخلی دروازے پر یہ پیمفلٹ لگائے اور کہا کہ وہ اس فیصلے پر عمل پیرا ہیں۔

محمد شریف کا کہنا تھا کہ ‘داڑھی پر ڈیزائن بنانا ٖاسلامی قوانین اور سنت کے خلاف ہے اور ہم نے یہ فیصلہ خود سے اور بغیر کسی دباؤ کے لیا ہے’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘اگر کوئی حجام اپنے صارفین کی داڑھی پر ڈیزائن بنانا ترک نہیں کرے گا تو ایسوسی ایشن اس کے خلاف کارروائی کرے گا’۔

انہوں نے کہا تھا کہ ایسوسی ایشن فیصلے پر عمل درآمد کے لیے صوبائی حکومت اور ضلعی انتظامیہ سے بھی رابطہ کرے گی۔

سرکلر روڈ پر حجام کی دکان چلانے والے شبیر نے اپنی دکان کے داخلی دروازے پر پیمفلٹ عیاں کرتے ہوئے اعلان کیا کہ انہوں نے ایسوسی ایشن کے فیصلے کے بعد داڑھی پر ڈیزائن بنانا ترک کردیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘ہم پہلے داڑھی پر اپنے صارفین کے مطالبے کے مطابق ڈیزائن بنایا کرتے تھے تاہم اب ہم انہیں منع کردیتے ہیں’۔

انہوں نے کہا کہ ‘اس سے ہمارے کاروبار پر اثر پڑے گا کیونکہ آج کل زیادہ تر نوجوان اپنی داڑھی پر ڈیزائن بنوانے آتے ہیں’۔

تاہم گلبہار علاقے کے حجام نے ایسوسی ایشن کے فیصلے کی مخالفت کی اور کہا کہ ‘ہماری ایسوسی ایشن کے عہدیداران کو ایسے فیصلے کرنے سے پہلے پوری برادری کو اعتماد میں لینا چاہیے’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘میں پیمفلٹ پر درج فیصلے پر عمل درآمد نہیں کروں گا’۔

انہوں نے کہا کہ ‘یہ ہمارے صارفین پر منحصر ہے کہ وہ داڑھی منڈوانا چاہتے ہیں، اسے کم کروانا چاہتے ہیں یا اس پر کوئی ڈیزائن بنوانا چاہتے ہیں، ہم ان کے مطالبے کو پورا کریں گے’۔

x

Check Also

مولانا کو قرض کی آفر

وزیراعظم عمران خان نے نوجوانوں کی فلاح و بہبود کے لیے ‘کامیاب جوان پروگرام’ کا ...

%d bloggers like this: