حکومت کو 3 ماہ میں نیا نیب قانون لانے کا حکم

سپریم کورٹ نے نیب آرڈیننس کی شق 25 اے پر ازخود نوٹس کیس کی سماعت کرتے ہوئے حکومت کو 3 ماہ میں نیب کا نیا قانون لانے کا حکم دے دیا ہے۔

خیال رہے کہ 2016 میں اس وقت کے چیف جسٹس آف پاکستان انور ظہیر جمالی نے 1999 کے قومی احتساب آرڈیننس کی 25 اے پر از خود نوٹس لیتے ہوئے اٹارنی جنرل آف پاکستان، تمام صوبائی ایڈووکیٹ جنرلز، چیئرمین نیب، نیب کے تمام ڈائریکٹرز جنرلز اور تمام صوبائی پراسیکیوٹر جنرلز سے جواب طلب کیا تھا۔

آج (بدھ کو) نیب آرڈیننس کی شق 25 اے پر لیے گئے از خود نوٹس کے مقدمے کی سماعت ہوئی جس میں ایڈیشنل اٹارنی جنرل عامر رحمٰن اور سینیٹر فاروق ایچ نائیک نے دلائل دیے۔تحریر جاری ہے‎

عدالت نے دوران سماعت ریمارکس دیے کہ توقع کرتے ہیں کہ حکام نیب قانون سے متعلق مسئلے کو حل کرلیں گے اور نیب قانون کے حوالے سے مناسب قانون پارلیمنٹ سے منظور ہوجائے گا۔

عدالت نے کہا کہ اٹارنی جنرل کے مطابق فاروق ایچ نائیک نیب قانون میں ترمیم کا بل پارلیمنٹ میں پیش کرچکے ہیں اور حکومت نیب قانون میں ترمیم کے لیے تمام سیاسی جماعتوں میں اتفاق رائے پیدا کرنے کی کوشش کررہی ہے۔

عدالت نے نیب قانون لانے کے لیے 3 ماہ کی مہلت دیتے ہوئے کہا کہ 3 ماہ میں مسئلہ حل نہ ہوا تو عدالت قانون اور میرٹ کو دیکھتے ہوئے کیس کا فیصلہ کرے گی۔

سماعت کے دوران چیف جسٹس آف پاکستان گلزار احمد نے سوال کیا کہ کیا 25 اے کے معاملے پر ترمیم ہوگئی ہے، کیا یہ معاملہ اب ختم ہوگیا ہے؟

عدالت عظمیٰ کے بینچ میں شامل جسٹس اعجاز الاحسن نے سوال کیا کہ نیب آرڈیننس کا سیکشن 25 اے ختم ہوا یا اس میں ترمیم ہوئی جس پر سینیٹر فاروق ایچ نائیک نے کہا کہ سینیٹ کی قائمہ کمیٹی میں نیب آرڈیننس سے متعلق میرا پرائیویٹ ممبر بل موجود ہے۔

انہوں نے کہا کہ سینیٹ کمیٹی سے منظوری کے بعد معاملہ ایوان میں جائے گا اور بل کے مطابق نیب کے آرڈیننس 25 اے کو مکمل طور پر ختم کیا جارہا ہے۔

اس موقع پر درخواست گزار اسد کھرل نے کہا کہ 2016 سے یہ کیس عدالت میں زیر سماعت ہے، 15 تاریخیں ہوچکی ہیں لیکن معاملہ جوں کا توں ہے جبکہ عدالت کا آخری حکم 23 مئی 2019 کو آیا تھا۔

چیف جسٹس نے فاروق ایچ نائیک سے سوال کیا کہ کیا آپ اس معاملے پر بحث کرنا چاہتے ہیں کیونکہ ہم تو معاملہ نمٹانے لگے ہیں لیکن اگر آپ نے بحث کرنی ہے تو نیب آرڈیننس کے سیکشن 25 اے کو آئین سے متصادم ثابت کریں۔

جسٹس گلزار احمد نے سوال کیا کہ کیا آپ کا مؤقف ہے کہ رضاکارانہ رقم کی واپسی کرنے والا شخص اپنا جرم بھی تسلیم کرے؟ کیا رضاکارانہ طور پر رقم واپس کرنے والے شخص کو سزا یافتہ تصور کیا جائے؟ کیا نیب آرڈیننس کے سیکشن 25 اے سے اب بھی کوئی مستفید ہورہا ہے۔

جس پر اسد کھرل نے جواب دیا کہ عدالت کے حکم امتناع کے باعث سیکشن 25 اے غیر فعال ہے اور حکومت اب نیا نیب آرڈیننس لے آئی ہے۔

جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیے کہ نیب کے بہت سے قوانین ہیں اور آپ کا مقدمہ 25اے سے متعلق ہے، اس حوالے سے بل حکومت کا نہیں بلکہ فاروق ایچ نائیک کا ہے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ نیب کا قانون ہے کہ پہلے انکوائری ہوگی پھر تحقیقات اور 200 گواہ بنیں گے، اس طرح تو ملزم کے خلاف زندگی بھر کیس ختم نہیں ہوگا، لوگوں کا پیسہ ہڑپ کر لیا جاتا ہے، کرپشن کی رقم واپس کرنے والوں کو نتائج کا سامنا بھی کرنا پڑے گا، سپریم کورٹ نیب کو پلی بارگین سے روک چکی ہے اور پارلیمنٹ کی جانب سے قانون سازی تک یہ اختیار استعمال نہیں کیا جا سکتا۔

چیف جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیے کہ حکومت نے نیب آرڈیننس کے ذریعے نیب کے پر کاٹ دیے ہیں، نیب میں تو دس دس سال کیس پڑے رہتے ہیں۔

چیف جسٹس گلزار احمد نے مزید ریمارکس دیئے کہ جب تک پارلیمنٹ قانون سازی نہیں کر لیتی یہ اختیار استعمال نہیں ہو گا اور حکومت نیب قانون کے معاملے کو زیادہ طول نہ دے کیونکہ نیب قوانین میں ترامیم پارلیمنٹ کا کام ہے، سپریم کورٹ نے نیب کی کسی دفعہ کو غیر آئینی قرار دیا تو نیب فارغ ہو جائے گا، کیا حکومت چاہتی ہے کہ نیب کے قانون کو فارغ کر دیں؟

عدالت نے نیا نیب قانون لانے کے لیے 3 ماہ کی مہلت دیتے ہوئے کہا کہ اگر 3 ماہ میں مسئلہ حل نہ ہوا تو میرٹ کے مطابق فیصلہ سنا دیں گے۔

x

Check Also

اسلام آباد(حیدر نقوی)عمران خان کی پریشانیوں میں ہر بڑھتے دن تک اضافہ ہوتا جارہا ہے اور ہر آنے والا دن ایک نئی کہانی سامنے لارہا ہے فردوس عاشق اعوان وفاقی حکومت کی ترجمان ہیں اور اُن کی کہی گئی ہر بات وزیر اعظم کی مرضی یا پالیسی کے مطابق ہوتی ہے مگر عمران خان کے ہی ایک وزیر فواد چوہدری نے ایک نجی ٹی وی کے پروگرام میں فردوس عاشق کے اس بیان کو جہا لت قرار دے دیا جس میں انھوں نے کہا تھا کہ عثمان بزدار پر تنقید وزیر اعظم پر تنقید کے برابر ہے گوکہ فردوس عاشق اعوان نے اسے فواد چوہدری کا بچپنا قرار دیا ہے مگر پنجاب کے ساتھ ساتھ وفاق میں بھی پی ٹی آئی کی صفوں میں سب کچھ صحیح نہیں لگ رہا اور پنجاب کے متعلق فواد چوہدری کے بیانات پر جہانگیر ترین کی خاموشی ایک بہت بڑا سوالیہ نشان ہے، اطلاعات یہ ہی ہیں کہ پرویز الہی کی خوشنودی کے لیے انھیں کہا گیا ہے کہ عثمان بزدار وزیر اعلی رہیں مگر فواد چوہدری کو مشیر اعلی بناکر زیادہ تر اختیارات دیئے جاسکتے ہیں جن سے پرویز الہی کی اچھی دوستی ہے اب دیکھنا یہ ہے کہ پرویز الہی اپنا وزن کہاں ڈالتے ہیں کیا مسلم لیگ نون کی مدد سے وزیر اعلی بننا چاہیں گے یا فواد چوہدری کو بطور مشیر اعلی موقع دیں گے۔ پنجاب اسمبلی کے بیس ارکان نے جن کا پی ٹی آئی سے تعلق ہے ایک الگ گروپ بنالیا ہے جو کہ واضح اشارہ ہے کہ یہ بیس ارکان پارٹی سے ہٹ کر بھی ایک ساتھ ہیں۔ دوسری طرف مقتدر حلقے اس بات پر ناراض ہیں کہ کچھ وفاقی اور صوبائی وزراء بار بار ہمارا نام اس طرح استعمال کرتے ہیں کہ جیسے سب کچھ ہمارے حکم پر ہوتا ہے گزشتہ دنوں ایک وفاقی وزیر کے اس طرح کے بیانات سامنے آئے تھے ان حلقوں کا کہنا ہے کہ ہم وفاقی حکومت کے ماتحت ایک ادارہ ہیں اور ہم نے نہ صرف موجودہ حکومت بلکہ ہر دور حکومت میں حکومت کے ساتھ ایک صفحہ پر رہ کر تعاون کیا ہے لہذا ایسا کوئی بھی پروپیگنڈا کہ ہم وفاقی حکومت کے ساتھ ایک صفحہ پر پہلی دفعہ آئے ہیں بالکل غلط ہے اور اس سلسلے میں قیاس آرائیاں نہیں ہونی چاہئیں۔ پی ٹی آئی کے نظریاتی کارکنان کے بعد اب سیاسی کارکنان بھی ناراض ہوتے جارہے ہیں اور وزیراعظم عمران خان کے غیر سیاسی دوستوں کی حکومت میں بے جا مداخلت اُن کی برداشت سے باہر ہوتی جارہی ہے، وزیر اعظم عمران خان کو اس سلسلے میں جلد بڑے فیصلے کرنا ہونگے ورنہ ناراضیوں میں اضافہ ہوجائے گا جو کہ اُن کی حکومت کے لیے بہتر نہیں۔ ان سیاسی کارکنان کا کہنا ہے کہ پہلے تو ہم سے کرپشن کے خلاف آوازیں اٹھوائی گئیں اور بیانیہ کو اتنا پھیلایا گیا کہ نواز شریف اور آصف زرداری کے حق میں بات کرنے والا ہر فرد چاہے وہ صحافی ہی کیوں نہ ہو بدترین کرپٹ نظر آیا اور اب وزیر اعظم کے دیرینہ دوست اور مشیر نعیم الحق نے ٹی وی پر بیٹھ کر کہہ دیا کہ اگر اپوزیشن ایک اشارہ بھی کرے تو ہم دوستی کے لیے تیار ہیں۔ حکومت کے انداز میں یہ تبدیلی ان کارکنان کے لیے انتہائی حیران کُن ہے اور اُن کا کہنا ہے کہ یا تو عمران خان اُس وقت غلط تھے یا پھر آج غلط ہیں۔

عمران کی پریشانیوں میں ہر روز اضافہ

اسلام آباد(حیدر نقوی)عمران خان کی پریشانیوں میں ہر بڑھتے دن تک اضافہ ہوتا جارہا ہے ...

%d bloggers like this: