تقریر کا جذبہ گورننس میں بھی نظر آنا چاہیے

تحریر: حسن نثار

سینئر تجزیہ کار حسن نثار نے کہا ہے کہ عمران خان جنرل اسمبلی سے خطاب میں اسکرپٹ سے باہر نہیں نکلے،وزیراعظم کی تقریر میں پورا ٹیم ورک دکھائی دیا،اب یہ ٹیم ورک، ہوم ورک اور محنت گورننس میں بھی نظر آنی چاہئے۔

عمران خان کی تقریر کتنی موثر تھی اس کیلئے ہندوستان کا ردعمل دیکھیں ان کی چیخیں نکل رہی ہیں ،دہشتگردی پیپلز پارٹی یا ن لیگ نے نہیں فوج نے ختم کی ہے۔ وہ جیو نیوز کے پروگرام ”میرے مطابق“ میں میزبان شجعیہ نیازی سے گفتگو کررہے تھے۔

جنرل اسمبلی میں عمران خان کے خطاب پر تبصرہ کرتے ہوئے حسن نثار نے کہا کہ عمران خان جنرل اسمبلی سے خطاب میں اسکرپٹ سے باہر نہیں نکلے، اسکرپٹ سے باہر نہ جانے کا مطلب یہ نہیں کہ پرچیاں اٹھائی ہوں بلکہ اس کا مطلب ہے کہ طے شدہ اور لکھی ہوئی چیزوں سے باہر نہیں جانا ہے اور اچھی تقاریراسکرپٹڈ ہی ہوتی ہیں۔

وزیراعظم کی تقریر میں کشمیر کا ذکر آخر میں کرنے پر اپوزیشن کے اعتراض پر حسن نثار نے کہا کہ اپوزیشن فضول بات کررہی ہے کہ کشمیر کا ذکر تقریر کے آخر میں کیوں کیا گیا۔

عمران خان نے کشمیر کی تصویر لٹکانے کیلئے قدم بہ قدم فاصلہ طے کیا، عمران خان کی تقریر کتنی موثر تھی اس کیلئے ہندوستان کا ردعمل دیکھیں ان کی چیخیں نکل رہی ہیں۔

حسن نثار کا کہنا تھا کہ بلاول بھٹو اگر عمران خان کی تقریر پر خاموش رہتا تو اچھا تھا، دنیا کی تاریخ میں بے شمار تقریریں ایسی ہیں جنہوں نے تقدیریں بدلی ہیں، عمران خان اپنی تقریر میں مہم جو نہیں مدبر اور مبلغ نظر آیا، بی بی سی کہتا ہے کہ کشمیریوں کی نئی نسل میں موت کا خوف ختم ہوچکا ہے۔

طیب اردوان کی طرف سے پاکستانی موقف کی حمایت پر حسن نثار کا کہنا تھا کہ ماضی میں ذوالفقار علی بھٹو اور شاہ فیصل دو قدآور آدمی ابھرے جنہیں انجام تک پہنچایا گیا، بھٹو نے بہت خطرناک کام کیے تھے جس کی قیمت بھی دی، پہلا کام اسلامی کانفرنس کا انعقاد اور دوسرا عربوں کو پٹرول ہتھیار کے طور پر استعمال کرنے کی ترغیب دی تھی، اب طیب اردوان اور عمران خان کے ساتھ محمد بن سلمان مسلم دنیا کی قیادت کرسکتے ہیں۔

پنجاب پولیس میں اصلاحات پر پولیس افسران اور بیوروکریسی میں تنازع پر حسن نثار نے کہا کہ شریف خاندان نے ہماری بیوروکریسی کا حال، نفسیات، شکل سب کچھ بگاڑ کر رکھ دیا ہے، ریونیو سے لے کر سوک ایشوز تک دیکھ لیں بیوروکریسی کسی قابل نہیں ہے، پولیس افسران بیوروکریسی کے اقدامات کا جواب دیں گے۔

پنجاب کابینہ میں تبدیلیوں کی خبروں پر حسن نثار نے کہا کہ میاں اسلم اقبال جیسے لوگ کابینہ سے جارہے ہیں تو پنجاب میں رہی سہی کسر بھی پوری ہوجائے گی، پنجاب میں ان تبدیلیوں کی قیمت پی ٹی آئی کو دینا پڑے گی۔

کراچی میں کوڑا پھینکنے پر گرفتاری پر حسن نثار کا کہنا تھا کہ کراچی میں کچرا پھینکنے والے کو الٹا لٹکا کر مارنا چاہئے، دہشتگردی پیپلز پارٹی یا ن لیگ نے نہیں فوج نے ختم کی ہے۔

چین میں سابق میئر کے گھر سے کئی ٹن سونا اور کھربوں روپے برآمد ہونے پر حسن نثار کا کہنا تھا کہ چین میں اب بددیانتی اور کرپشن کیخلاف ایکشن ہورہا ہے، چین کے قائم خانی اب ختم ہوتے جارہے ہیں،پاکستان میں بھی اس طرح کام کرنا ہوگا۔

x

Check Also

بڑے بڑے دانشوروں کی تحریروں سے گزرتے اور بڑے بڑے میڈیا ماہرین کی گفتگو سنتے ہوئے کبھی کبھی حیرت ہوتی ہے اور اختلاف کرنے کو جی چاہتا ہے۔ اخبار یا ٹیلی وژن چینل سے وابستہ حضرات کی اکثریت سے مطالعے، تحقیق اور غور و فکر کی توقع رکھنا دل شکنی کا باعث ہو سکتا ہے کیونکہ ان لوگوں کو فرصت کم کم نصیب ہوتی ہے۔ ویسے بھی معاشرے میں ان کو اتنی پذیرائی اور شہرت مل جاتی ہے کہ وہ کتاب سے خاصی حد تک بے نیاز ہو جاتے ہیں اور عام طور پر شہرت کے تکبر کا شکار ہو جاتے ہیں، البتہ کچھ حضرات کتاب سے تعلق نبھاتے ہیں اور غور و فکر کے لئے بھی وقت نکالتے ہیں۔ عام طور پر لیڈروں کے حوالے سے کہا جاتا ہے کہ یہ ان کا ذاتی معاملہ ہے۔ اس طرح لیڈران کی زندگی کو ذاتی اور عوامی شعبوں میں تقسیم کر دیا جاتا ہے اور بہت سی شرعی قباحتوں کو ذاتی زندگی کے خانے میں ڈال کر جائز اور ناجائز کی بحث سے خارج کر دیا جاتا ہے۔ بادشاہتوں اور خاندانی آمریتوں میں ایسا ہی ہوتا ہے کیونکہ ان معاشروں میں حکمرانوں کی جانب انگلی اٹھانے کی جسارت گردن زدنی کا باعث بھی بن سکتی ہے لیکن جمہوری یا نیم جمہوری نظام میں حکمرانوں کی ذاتی زندگی پر تصور موجود ہی نہیں ہوتا۔ حکمران ہر فعل کیلئے عوام کے سامنے جوابدہ ہوتا ہے حتیٰ کہ اگر اقتدار کا تاج پہننے سے قبل بھی اس نے کوئی غلط کام کیا ہے تو اقتدار میں آنے کے بعد اس کا بھی احتساب کیا جاتا ہے۔ حکمران یا لیڈر قوم کا رول ماڈل ہوتا ہے اور اس کی ہر حرکت، ہر پالیسی اور ہر اقدام قوم کو کسی نہ کسی طرح متاثر کرتا ہے۔ ہم نے گزشتہ 72برسوں میں یہاں اسی طرح کا کلچر پروان چڑھتے دیکھا ہے جس قسم کی حکمران کی شخصیت تھی، ہم نے قومی عادات، سماجی رویے حتیٰ کہ لباس کو بھی حکمرانوں کی شخصیت سے متاثر ہوتے دیکھا ہے۔ تفصیل میں جائے بغیر آپ خود غور کریں کہ ایوب خان، بھٹو، ضیاء الحق، بینظیر اور نواز شریف کے ادوار اور پھر جنرل مشرف کے دورِ حکومت میں ہمارا معاشرہ کس طرح حاکموں کی شخصیتوں سے متاثر ہوتا رہا اور ان کی ذاتی زندگیوں کی پرچھائیں ہر طرف نظر آتی رہیں، اگر ضیاء الحق کے دور میں مساجد میں حاضری بڑھی اور شلوار قمیص واسکٹ کا رواج پروان چڑھا تو جنرل مشرف کے دور میں انگریزی لباس، نائو نوش اور رقص و سرور کی خوب حوصلہ افزائی ہوئی۔ کرپٹ حکمرانوں کے دور میں اوپر سے لے کر نیچے تک کرپشن نے رواج پایا اور ایماندار حاکموں کے دور میں کرپشن محتاط رہی۔ سیاست اور جمہوریت کا پہلا اصول ہی Transparency یعنی شفافیت ہے جس کا مطلب ہوتا ہے اندر باہر کا واضح ہونا، ذاتی اور سیاسی زندگی کا بے نقاب ہونا۔ اسی سے آزادیٔ اظہار کے چشمے پھوٹتے ہیں اور اسی سے احتساب یا جوابدہی کا سورج طلوع ہوتا ہے۔ کسی لیڈر کے حوالے سے کسی بات کو ذاتی کہہ کر اسے ڈھال یا پردہ فراہم کرنا جمہوری اصولوں کے منافی ہے۔ میرے مشاہدے کے مطابق سیاستدان اور لیڈر کے لئے سب سے اہم اور قیمتی شے اس کا ووٹ بینک، سیاسی حمایت اور پھر اسی حوالے سے اس کی پارٹی اور کارکن ہوتے ہیں۔ لیڈر ان شعبوں کو بچانے، محفوظ رکھنے اور مضبوط بنانے کے لئے ہمہ وقت سوچتا اور کام کرتا ہے اور ضرورت پڑنے پر ان کے لئے بڑی سے بڑی قربانی بھی دے سکتا ہے۔ سینکڑوں مثالیں واضح کرتی ہیں کہ کس طرح لیڈر اور حکمران نے محض اپنے ان سیاسی اثاثوں کو بچانے کے لئے اقتدار چھوڑ دیا حتیٰ کہ جان بھی دے دی۔ بھٹو صاحب جب جیل میں پڑے موت کا انتظار کر رہے تھے تو بیشک وہ تاریخ میں سرخرو ہونے کا خواب دیکھ رہے تھے، تاریخ میں سرخرو ہونے کیلئے ہی مستحکم ووٹ بینک اور پارٹی کی ضرورت ہوتی ہے۔ لیاقت علی خان قائداعظم کے ساتھی، تحریک پاکستان کے بڑے کارکن اور مقبول سیاسی لیڈر تھے۔ ملک و قوم کے لئے ان کا ایثار ایک مثال کی حیثیت رکھتا ہے۔ انہیں دن دہاڑے شہید کر دیا گیا۔ ان کے مقابلے میں بھٹو صاحب نہ تحریک پاکستان کے لیڈر تھے اور نہ ہی قائداعظم کے ساتھی بلکہ آمریت کی پیداوار تھے، پھر کیا وجہ ہے کہ موت کے بعد بھٹو صاحب لیاقت علی خان کے مقابلے میں زیادہ مقبول و موثر لیڈر بن کر ابھرے۔ بہت سی وجوہ ہوں گی لیکن میرے نزدیک اس صورتحال کی بڑی وجہ بھٹو صاحب کی سیاسی پارٹی، ووٹ بینک اور سیاسی کارکن تھے جبکہ لیاقت علی خان کو ان کی شہادت کے بعد ان کی پارٹی نے کوئی اہمیت نہ دی۔ لیاقت علی خان کے صاحبزادگان چھوٹے تھے، اگر وہ جوان ہوکر سیاست میں قدم رکھتے اور اپنے باپ کی مقبولیت سے فائدہ اٹھانا چاہتے تو انہیں مایوسی ہوتی۔ اس کے برعکس طویل جلا وطنی اور پابندیوں کے باوجود بینظیر کو اپنے باپ کی پارٹی، کارکن اور ووٹ بینک ورثے میں ملے اور ان کے دوبار وزیراعظم بننے کا ذریعہ بنے۔ اس پسِ منظر میں اگر آپ حکومتی وزراء اور سیاسی عہدیداران کے تبصرے پڑھیں تو وہ سیاسی بلوغت سے تہی لگتے ہیں، جن صاحبانِ مناصب کو یہ اصرار ہے کہ میاں نواز شریف واپس نہیں آئیں گے، انہیں فرصت کے چند لمحات نکال کر سوچنا چاہئے کہ میاں صاحب کی سیاسی زندگی 37برسوں پر محیط ہے، انہوں نے سیاست کے میدان میں محنت اور سرمایہ کاری کی ہے، گمنامی سے نکل کر ناموری کے لبِ بام پہ آئے ہیں، ان کی پارٹی، ووٹ بینک اور وفادار کارکن ان کا سب سے بڑا سرمایہ ہیں، مریم اسی وراثت کی امین ہے اس لئے شفایاب ہو کر وہ ہر صورت واپس آئیں گے اور محض جیل کے ڈر سے زندگی بھر کا سرمایہ ضائع نہیں کریں گے۔ سیاستدان کے لئے جیل عارضی شے ہوتی ہے جس کی دیواریں گرتے دیر نہیں لگتی۔ پسند ناپسند سے بالاتر یہ میری ذاتی رائے ہے جس سے آپ کو اختلاف بھی ہو سکتا ہے۔

سیاست کے دو رُخ

تحریر: ڈاکٹر صفدر محمود بڑے بڑے دانشوروں کی تحریروں سے گزرتے اور بڑے بڑے میڈیا ...

%d bloggers like this: