سپریم کورٹ کا ملٹری لینڈز پر قائم شادی ہالز ختم کرنے کا حکم

سپریم کورٹ کا ملٹری لینڈز پر قائم شادی ہالز ختم کرنے کا حکم

سپریم کورٹ نے کراچی میں ملٹری لینڈز پر شادی ہالز اور تجارتی سرگرمیاں خلاف قانون قرار دے دیں۔ عدالت نے دفاعی مقاصد کیلئے حاصل کی گئی زمینوں سے شادی ہالز فوری ختم کرنے کا حکم دے دیا۔

جسٹس گلزار احمد کی زیر صدارت سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں اہم اجلاس ہوا جس میں دفاعی مقاصد کیلئے حاصل کی گئی زمینوں پر قائم شادی ہالز ختم کرنے کا حکم دیا گیا ہے۔

سپریم کورٹ نے کہا کہ کراچی میں ملٹری لینڈ پر قائم شادی ہالز ختم کئے جائیں، دفاعی مقاصد کیلئے لی گئی زمین پر تجارتی سرگرمیاں غیر قانونی ہیں۔

جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیئے کہ اسپتالوں کیلئے مختص زمینوں پر شادی ہالز بنائے گئے۔ عدالت نے ڈی ایچ اے کے تمام فیزز میں جدید لائبریریاں بنانے کی بھی ہدایت کی۔

جسٹس گلزار احمد سپریم کورٹ کی ہدایت پر شہر قائد میں ہونیوالی انسداد تجاوزات مہم کی نگرانی کررہے ہیں، وہ ہر ہفتہ کراچی آتے ہیں جہاں سرکاری محکمے اور مقامی انتظامیہ سے اس حوالے سے رپورٹ طلب کی جاتی ہے۔

سپریم کورٹ پاکستان نے 23 نومبر کو مقامی انتظامیہ کو ہدایت کی تھی کہ کراچی کے علاقوں پرانی سبزی منڈی اور کالا پل کے قریب قائم شادی ہالز مسمار کئے جائیں۔

اس سے قبل 2017ء میں کے ڈی اے نے رفاہی پلاٹس پر قائم شادی ہالز کیخلاف مہم شروع کی تھی، اس دوران شہر کے مختلف علاقوں میں 50 سے زائد شادی ہالز مسمار کئے گئے تھے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

x

Check Also

دنیاکے 20بڑوں میں کیا اختلافات ہیں؟

دنیا کی 20 ترقی یافتہ اور ابھرتی اقتصادیات کے حامل ملکوں کے گروپ جی ٹوئنٹی ...