Bangladesh lifts Ashraful ban from domestic cricket

Bangladesh’s cricket authorities Saturday partially lifted the ban on former captain Mohammad Ashraful, allowing him to play in selected domestic competitions, officials said.

Ashraful was initially banned for eight years in 2014 after he tearfully confessed on national television to helping fix matches in the scandal-hit Bangladesh Premier League.

The Twenty20 tournament was eventually left suspended in the wake of the match-fixing controversy before resuming in 2015 with six new franchises.

A local appeal panel in September 2014 cut Ashraful’s ban to five years including a two-year suspended sentence, meaning he can return to competitive cricket from August 2016.

The Bangladesh Cricket Board and the International Cricket Council had lodged an appeal to the Court of Arbitration for Sport in Lausanne, Switzerland against his reduced ban in October 2014, but later withdrew it.

“Mr Ashraful is eligible to play domestic cricket from the 13th August 2016. However, he will be ineligible to play international cricket or the BPL (until 2018),” said Yasin Patel, a British lawyer who represented Ashraful during the trial.

BCB chief executive officer Nizamuddin Chowdhury said they were now waiting for an ICC response to determine which domestic competitions Ashraful will be allowed to play.

“Ashraful”s ban will be lifted on August 13,” Chowdhury told AFP on Friday.

“We have now asked for a clarification from the ICC, clearly specifying which competitions he will be allowed to play.”

An ICC spokesman declined to make any comment.

Ashraful, Test cricket’s youngest century-maker, made his debut at the national level at the age of 17. He has played 61 Tests, 177 one-day internationals and 23 T20 international matches.

The 32-year old said partial lifting of the ban gave him a fresh opportunity to restart his career.

“This is a new beginning for me,” Ashraful told reporters at his residence after he returned from Britain in the morning.

“I got a new opportunity to revive my career. Now my first priority is to perform well in domestic cricket.

“If I can do that I hope the BCB will take initiative to lift my ban from international cricket too,” he said, adding he still had many years left to play.

“I think I’ve yet to give my best to cricket,” he said.

ICC anti-corruption investigators discovered the fixing scam after being asked by Bangladesh authorities to monitor the lucrative T20 tournament.

Ashraful is now expected to resume his domestic career in late September with the Bangladesh Cricket League, the country’s inter-provincial first-class competition

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

x

Check Also

فاسٹ بولر محمد عامر کو جنوبی افریقا کے دورے میں پاکستان ٹیم میں دوبارہ شامل کئے جانے کے امکانات روشن ہو گئے ہیں۔ ایشیا کپ میں خراب کارکردگی کے بعد سلیکٹرز نے محمد عامر کو تینوں فارمیٹس کی ٹیم سے ڈراپ کر دیا تھا۔ اس دوران محمد عامر نے سوئی سدرن گیس کی جانب سے فرسٹ کلاس اور ون ڈے ٹورنامنٹ میں شرکت کی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ محمد عامر کو آف اسپنر بلال آصف کی جگہ ٹیم میں شامل کیا جائے گا جب کہ تیسرے اوپنر کی حیثیت سے شان مسعود کو ٹیم میں شامل کئے جانے کا امکان بھی روشن ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ایک رائے یہ بھی ہے کہ جنوبی افریقا کے دورے میں دو وکٹ کیپرز شامل ہوں، ایسے میں محمد بھی رضوان ٹیم کا حصہ بن سکتے ہیں۔ کپتان سرفراز احمد کی موجودگی میں پاکستان ٹیم میں ایک ریزرو وکٹ کیپر محمد رضوان کو شامل کیا جا رہا ہے۔ محمد رضوان پاکستان اے کی کپتانی کر رہے ہیں اور بیٹنگ کے شعبے میں مسلسل اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ رضوان 649 رنز کے ساتھ 20 کیچ بھی وکٹوں کے پیچھے لے چکے ہیں۔ پشاور سے تعلق رکھنے والے 26 سالہ وکٹ کیپر محمد رضوان نے پاکستان کی جانب سے واحد ٹیسٹ نیوزی لینڈ کے خلاف ہیملٹن میں نومبر 2016 میں کھیلا تھا، جس میں وہ صرف 13 رنز تک محدود رہے۔ رضوان اب تک 25 ایک روزہ میچوں اور 10 ٹی ٹوئنٹی میچوں میں پاکستان کی نمائندگی بھی کر چکے ہیں۔ فخر زمان گھٹنے کی انجری کے باعث جنوبی افریقا کے خلاف سیریز کے پہلے ٹیسٹ سے آوٹ ہو چکے ہیں۔ ہیڈ کوچ مکی آرتھر ان فٹ اوپنر کو کھلاتے رہے جس سے فخر زمان کی تکلیف میں اضافہ ہو گیا۔ فخر زمان زمان آسٹریلیا کے خلاف سیریز میں گھٹنے کی تکلیف کا شکار ہوئے تھے اور انہوں نے گھٹنے کی تکلیف کے بارے میں ٹیم انتظامیہ کو آگاہ کر دیا تھا۔ سلیکٹرز اور ٹیم انتظامیہ پُرامید ہے کہ فاسٹ بولر محمد عباس اہم سیریز سے قبل مکمل فٹ ہو جائیں گے۔ محمد عباس کی ٹیم میں شمولیت ان کی فٹنس سے مشروط ہے۔ جنوبی افریقا کے خلاف ٹیسٹ سیریز کے لیے پاکستان ٹیم کو حتمی شکل دی جانے لگی ہے۔ تین ٹیسٹ میچوں کی سیریز کا پہلا ٹیسٹ 26 دسمبر سے کھیلا جائے گا۔ ٹیسٹ سیریز سے قبل 19 دسمبر سے تین روزہ پریکٹس میچ بھی کھیلا جائے گا۔ ٹیسٹ ٹیم کے لئے پاکستان کی ممکنہ ٹیم میں کپتان سرفرازاحمد، محمد حفیظ، امام الحق، بابر اعظم، حارث سہیل، اظہر علی، سعد علی، حسن علی، میر حمزہ ،محمد عامر، فہیم اشرف، شاہین شاہ آفریدی، اسد شفیق اور یاسر شاہ شامل ہوں گے۔

دورہ جنوبی افریقا، محمد عامر کے ٹیم میں شمولیت کا امکان

فاسٹ بولر محمد عامر کو جنوبی افریقا کے دورے میں پاکستان ٹیم میں دوبارہ شامل ...